Nahjul Balagha Urdu Unicode نہج البلاغہ اردو

نہج البلاغہ كلمہ قصار نمبر 30

حضرت علیہ السّلام سے ایمان کے متعلق سوال کیا گیا

تو آپ ؑنے فرمایا :  ایمان چار ستونوں پر قائم ہے۔صبر ‘ یقین ‘ عدل اور جہاد۔

پھرصبر کی چار شاخیں ہیں۔اشتیاق ‘ خوف ‘ دنیا سے بے اعتنائی اور انتظار۔

اس لیے کہ جو جنت کا مشتاق ہوگا  وہ خواہشوں کو بھلا دے گا

اور جو دوزخ سے خوف کھائے گا وہ محرمات سے کنارہ کشی کرے گا

اور جو دنیا سے بے اعتنائی اختیا ر کر ے گا  وہ مصیبتوں کو سہل سمجھے گا

اور جسے موت کا انتظا ر ہوگا  وہ نیک کاموں میں جلدی کرے گا۔

اور یقین کی بھی چار شاخیں ہیں۔روشن نگاہی ‘ حقیقت رسی ‘ عبرت اندوزی اور اگلوں کا طور طریقہ۔

چنانچہ جو دانش و آگہی حاصل کرے گا اس کے سامنے علم و عمل کی راہیں واضح ہو جائیں گی۔

اور جس کے لیے علم وعمل آشکار ہو جائے گا وہ عبرت سے آشنا ہوگا وہ ایسا ہے جیسے وہ پہلے لوگوں میں موجود رہا ہو۔

اور عدل کی بھی چار شاخیں ہیں ‘ تہوں تک پہنچنے والی فکر اور علمی گہرائی اور فیصلہ کی خوبی اور عقل کی پائیداری۔

چنانچہ جس نے غور و فکر کیا وہ علم کی گہرائیوں میں اترا ‘ وہ فیصلہ کے سر چشموں سے سیراب ہوکر پلٹا

اور جس نے حلم و بردباری اختیار کیاس نے اپنے معاملات میں کوئی کمی نہیں کی اور لوگوں میں نیک نام رہ کر ز ندگی بسر کی۔

اورجہاد کی بھی چار شاخیں ہیں۔امر بالمعروف ‘ نہی عن المنکر ‘ تمام موقعوں راست گفتاری اور بدکرداروں سے نفرت۔

چنانچہ جس نے امر بالمعروف کیا اس نے مومنین کی پشت مضبوط کی ۔

اور جس نے نہی عن المنکر کیا اس نے کافروں کو ذلیل کیا۔

اور جس نے تمام موقعوں پر سچ بولا اس نے اپنا فرض اداکردیا ۔

او رجس نے فاسقوں کو براسمجھا اور اللہ کے لیے غضبناک ہوا اللہ بھی اس کے لیے دوسروں پر غضبناک ہو گا اور قیامت کے دن اس کی خوشی کا سامان کرے گا۔